’’مسلم نوجوانوں کو بے بنیاد گرفتار کرنے والے دہلی اسپیشل سیل کو دی جائے پانچ سال قید کی سزا اور پانچ پانچ لاکھ کا جرمانہ‘‘ مسلم کمیونٹی کی ہتک عزت پر کورٹ نافذ کرے فیصلہ ۔ خاطی پولیس کوسزا نہیں دی گئی تو حکومت کے خلاف چلائی جائے گی ملک گیر تحریک عدم اعتما

۱۰؍ مئی، ۲۰۱۶، مطابق: ۲؍ شعبان المعظم ۱۴۳۷ھ ؁، شاہین باغ ، نئی دہلی۔
’’مسلم نوجوانوں کو بے بنیاد گرفتار کرنے والے دہلی اسپیشل سیل کو دی جائے پانچ سال قید کی سزا اور پانچ پانچ لاکھ کا جرمانہ‘‘
مسلم کمیونٹی کی ہتک عزت پر کورٹ نافذ کرے فیصلہ ۔ خاطی پولیس کوسزا نہیں دی گئی تو حکومت کے خلاف چلائی جائے گی ملک گیر تحریک عدم اعتماد۔ آل انڈیا امامس کونسل

’’ملک کے دن بہ بدن بگڑتے انتظامی حالات اور مسلمانوں پر آئے دن ہورہے مظالم کے تعلق سے آج ۱۰؍ مئی کو تریوندرم (کیرلا) میں آل انڈیا امامس کونسل کی ایک ایمرجنسی سکریٹریٹ میٹنگ بلائی گئی، جس میں کونسل کے قومی نائب صدر کرمنا اشرف مولوی (کیرلا) جنرل سکریٹری مولانا شاہ الحمید باقوی (چنئی) قومی ناظم عمومی مفتی حنیف احرارؔ سوپولوی (گوا) ہیڈ آفس انچارج و نیشنل سکریٹری فیصل مولوی اور کیرلا کونسل کے جنرل سکریٹری نثار مولوی کے ساتھ دیگر حضرات نے شرکت کی۔ موجودہ حالات پر مفصل گفتگو کے بعد کونسل نے دہلی اسپیشل سیل کی طرف سے حالیہ بے بنیاد گرفتاریوں پر افسوس کا اظہار کیا اور اس کی پر زور مذمت کر تے ہوے اس کو مسلم کمیونٹی کی ہتک عزت قرار دیا اور حکومت وقت سے مطالبہ کیا ہے کہ اسپیشل سیل کے خاطی افراد کو فوری طور پر پانچ سال کی سزا اور پانچ پانچ لاکھ کا جرمانہ عائد کیا جائے ؛ تاکہ آئندہ کسی بھی کمیونٹی کے ساتھ اس طرح کی غیر ذمہ دارانہ دست درازیاں نہ ہوں۔ شبہ کے نام پر مسلم نوجوانوں اور علماؤں کو گرفتار کرلینا پولیس والوں کے لیے اپنی ناک اونچی کرنے کا ایک حربہ بن گیا ہے۔اس پر روک لگانا حکومت کی ذمہ داری ہے‘‘ ۔
قومی نائب صدر کرمنا اشرف مولوی نے کہاکہ : ’’بے بنیاد مسلم نوجوانوں کی گرفتاریوں پر سیاست بند کیا جائے۔ ملک میں قانون ہے، ملک کو قانون کے مطابق ہی چلانا چاہیے؛ جب تک ملک میں قانون کی بالادستی نہیں ہوگی امن و انصاف قائم نہیں ہو سکے گا‘‘۔
کونسل کے قومی سکریٹری مولانا شاہ الحمید باقوی نے کہا کہ : ’’آخر شبہ کے نام پر صرف مسلم نوجوان ہی کیوں پکڑے جاتے ہیں؟ تمام نوجوانوں کا کورٹ سے بے گناہ ثابت ہو کر رہا ہونا، ان کے منھ پر زبردست طماچہ ہے۔ اس کے باجودگرفتاریاں مسلم کمیونٹی کو بدنام کرنے کی منظم سازش ہے۔ ملک کے ۳۰ ؍ کروڑ مسلمانوں کے لیے یہ بہت ہی سنگین مسئلہ۔ حکومت فوری طور پر اس سمت میں آئینی اقدامات کرے ‘‘۔
کونسل کے نیشنل جنرل سکریٹری اور قومی ترجمان مفتی حنیف احرارؔ سوپولوی نے کہا کہ : ’’ملک میں رَوَاداری اور امن و امان بحال کرنے کے لیے ضروری ہے کہ خاطی پولیس اہل کار کو ان کی غلطی کی سزا دی جائے ؛ تاکہ بار بار ایسے واقعات رونما نہ ہوں‘‘۔
قومی ترجمان مفتی احرارؔ نے کہاکہ : ’’ آل انڈیا امامس کونسل حکومتوں بالخصوص مرکزی حکومت سے مطالبہ کرتی ہے کہ قومی اعتماد بحال کرنے اور ہتک عزت پر روک لگانے کے لیے دہلی اسپیشل سیل کے خاطی پولیس اہل کار کو پانچ سال قید کی سزا اور پانچ پانچ لاکھ جرمانہ عائد کیا جائے۔ اگر اسپیشل سیل کے خلاف کاروائی نہیں کی جاتی ہے تو آل انڈیا امامس کونسل حکومت کے خلاف ملک گیر تحریک عدم اعتماد شروع کرے گی‘‘۔
ایم ، ایچ ، احرارؔ سوپولوی
قومی ترجمان : آل انڈیا امامس کونسل

 

Location


DELHI
F-20, III Floor, Shaheen Bagh, Jamia Nagar, Okhla, New Delhi 110025, India

 

Contact

Give us a call at

+91 98809 80310

+91 99607 19466

Email us at allindiaimamscouncil@gmail.com

 

Newsletters

Subscribe and get the latest updates, news, and more...