سیمی کے نام پر انکاؤنٹر بھوپال پولیس کی مسلم دشمنی تشت ازبام،خاطیوں کو نوکری سے برخاست کر کے دی جائے عمر قید کی سزا ۔

۲؍ نومبر، ۲۰۱۶ء ؁، مطابق:۱؍ صفر المظفر ۱۴۳۸ھ ؁، شاہین باغ ، نئی دہلی۔
سیمی کے نام پر انکاؤنٹر بھوپال پولیس کی مسلم دشمنی تشت ازبام،خاطیوں کو نوکری سے برخاست کر کے دی جائے عمر قید کی سزا ۔
’’راشٹرپتی فوری طور اپنا فیصلہ دے۔ ملک میں دلتوں اور مسلمانوں کے ساتھ انکاؤنٹر کے واردات میں اضافہ باعث تشویش ‘‘ آل انڈیا امامس کونسل

’’بھوپال سینٹرل جیل سے بھاگنے کے جرم میں سیمی سے متعلق آٹھ نوجوانوں کا انکاؤنٹر بھوپال پولیس کی مسلم دشمنی کی واضح نشانی ہے۔ انکاؤنٹر جمہوری ملک میں کسی بھی طرح جائز نہیں ہے۔ جمہوریت کا مطلب عوامی اختیارات کو عام کرنا ہے نہ کہ پولیس کی من مانی کو۔ یہ انکاؤنٹر سوچھی سمجھی سازش کا نتیجہ ہے؛ اس لیے انکاؤنٹر میں ملوث تمام افراد کو نوکریوں سے برخاست کر کے عمر قید کی سزا دی جائے۔ جمہوری ملک میں کسی بھی بہانے سے انکاؤنٹر ملک کی سلامتی کے لیے ایک سوالیہ نشان ہے۔ اس انکاؤنٹر کو سراسر آئین کے اوپر حملہ قرار د یتے ہوے آل انڈیا امامس کونسل کے قومی صدر مولانا عثمان بیگ رشادی نے کہا کہ : ’’انکاؤنٹر میں ملوث تمام خاطی افراد کو فوری طور پر نوکریوں سے برخاست کرکے عمر قید کی سزا دی جائے‘‘۔
انھوں نے اس انکاؤنٹر کو فرضی قرار دیتے ہوے کہا کہ : ’’دلتوں اور مسلمانوں میں دہشت پیدا کرنے کے لیے اس طرح کی گندی کاروائیاں کی جا رہی ہیں۔ جب تک ایسے غیر قانونی اقدامات میں ملوث (وہ خواہ پولیس ہو یا کسی بھی گروہ سے متعلق) افراد کو سخت سزا نہیں دی جاتی ہے، اس پر کنٹرول نہیں پایا جا سکتا ہے ‘‘۔ آل انڈیا امامس کونسل کے قومی صدر نے زور دے کر کہا کہ : ’’مجرمین کو فوراً سزا دی جائے اور مقتولین کے ورثاء کو ایک ایک کروڑ کا معاوضہ دیا جائے‘‘۔
قومی صدر مولانا رشادی نے یہ بھی کہا کہ : ’’یہ آٹھوں نوجوان ثبوت نہیں ملنے کی وجہ سے بہت ہی جلد رہا ہونے والے تھے۔ ثبوت فراہم نہیں کرنے کی وجہ سے پولیس اپنی خامیوں پر پردہ ڈالنے کے لیے ان بے قصور نوجوانوں کو فرضی انکاؤنٹر میں مارا ہے؛ اس لیے سپریم کورٹ اپنی نگرانی میں ان تمام معاملات کی انکوائری کرائے اور جلد سے جلد خاطیوں کو سامنے لایا جائے اور انھیں سخت سے سخت سزا دی جائے ؛ تاکہ آئندہ کوئی بھی پولیس والا ایسا کرنے کے لیے سوچ بھی نہ سکیں‘‘ ۔
آل انڈیا امامس کونسل کے قومی ترجمان نے بتایا کہ : ’’آج یکم صفر المظفر کو شاہین باغ نئی دہلی ہیڈ آفس میں آل انڈیا امامس کونسل کی ہنگامی سکریٹریٹ میٹنگ بلائی گئی جس میں ملک کے مختلف مسائل کے ساتھ بھوپال انکاؤنٹر کی مذمت کی گئی اور اسے ملک کے لیے بہت ہی افسوسناک بتایا گیا اور یہ ریزولیوشن پاس کیا گیا کہ انکاؤنٹر کرنے والوں کو جلد از جلد قانونی سزا دی جائے اور مقتولین کے ورثاء کو ایک ایک کروڑ کا معاوضہ دیا جائے اور آئندہ انکاؤنٹر پر مکمل پابندی عائد کی جائے ‘‘۔
ایم، ایچ، احرارؔ سوپولوی
قومی ترجمان: آل انڈیا امامس کونسل

 

Location


DELHI
F-20, III Floor, Shaheen Bagh, Jamia Nagar, Okhla, New Delhi 110025, India

 

Contact

Give us a call at

+91 98809 80310

+91 99607 19466

Email us at allindiaimamscouncil@gmail.com

 

Newsletters

Subscribe and get the latest updates, news, and more...